جب روضۂ  کی  سنہری مبارک جالیاں نہیں تھیں
==============================

روضۂ رسول صلی الله علیہ وسلم کے سامنے جب سنہری جالیاں نہیں تھیں اس وقت عاشقان رسول صلی الله علیہ وسلم بالکل حجرے مبارک کی دیوار تک آجاتے تھے اور اس مقام پر اس بات کا تعین کرنے کے لیے کہ حجرے مبارک میں موجود تینوں قبور کی اصل لوکیشن کیا ہے ، فرش پر تین دایرے بنایے گیے تھے جو زایرین کو اصل قبور کے عین سامنے آ کر ہدیہ درود و سلام پیش کرنے کا موقع فراہم کرتے تھے -

سنہری جالیوں کے لگنے کے بعد عاشقان رسول صلی الله علیہ وسلم جہاں حجرے مبارک کی دیوار تک پہنچنے کی سعادت سے محروم ہو گیے وہیں وہ فرش پر بنے ان تین دایروں کی زیارت سے بھی محروم ہو گیے -

سنہری جالیاں جب لگائی گیئں تو اس میں بھی فرش پر بنے تینوں دایروں کے مماثل تین دایرے بنایے گیے جو رسول مکرم سیدنا محمد صلی الله علیہ وسلم سمیت تینوں قبور مبارکہ کی نشان دہی کرتے ہیں اور آج بھی لوگ سنہری جالیوں کے انہی تین دایروں کے سامنے کھڑے ہو کر درود و سلام کا ہدیہ پیش کرتے ہیں - لیکن جب وہ ایسا کرتے ہیں تو انمیں سے بہت کم کو علم ہوتا ہے کہ جالیوں کے اس پار آج بھی فرش پر وہ تین دائرے موجود ہیں جہاں پہلے لوگ پہنچ جایا کر تے تھے -

آج کی اھلا'' تصویر میں انہی دائروں کو آپ کے لیے پیش کیا گیا ہے جن کا اب جسمانی حاضری کے باوجود دیکھنا ممکن نہیں -

اگر آپ تصویر کو ایک مرتبہ پھر غور سے دیکھیں تو آپکو آج بھی فرش پر بنے ان دائروں کے سامنے والی حجرے مبارک کی دیوار پر جو غلاف چڑھا ہے اس پر دائروں کے مقابل رسول مکرم '' سیدنا محمد صلی الله علیہ وسلم '' ، '' سیدنا ابوبکر رضی الله تعالی عنہہ '' اور '' سیدنا عمر رضی الله تعالی عنہہ '' کے اسمائے گرامی انکی قبور مبارکہ کی نشان دہی کرتے ہوے لکھے نظر آئیں گے -

NEXT PAGE
PREVIOUS PAGE
 LIST PAGE