خوش قسمت غوطہ خور اور نوادرات
========================


زم زم پینا ایک بہت بڑی سعادت ہے لیکن اگر کسی انسان کو زم زم کے کنویں میں غوطہ مارنے کی سعادت حاصل ہو جایے تو اسکے نصیب کو آپ کیا کہیں گے -

جی ہان آج سے انتالیس سال پہلے محمد لطیف اور محمّد یونس دو ایسے خوش قسمت انسان تھے جہاں الله سبحان و تعالی نے زم زم کے کنویں میں اترنے کی سعادت نصیب فرمائی -
زیر نظر تصویر میں دو نیلے تیروں کی مدد سے ان دونوں خوش نصیب انسانوں کو دیکھایا گیا ہے جو زم زم کے کنویں کے قریب غوطہ خوری کا لباس زیب تن کے کنویں میں اترنے کے لیے تیار ہیں جبکہ لال تیر سے ایک غوطہ خور کو زم زم میں تیرتے ہوے دیکھایا گیا ہے - سبز تیر میں غوطہ خور زم زم کے کنویں کے دھانے پر نظر آرہے ہیں -
صدیوں سے آب زمزم کا کنواں خانہ کعبہ سے 21 میٹر دور ، مشرق میں ملتزم کے بالمقابل ، خانہ کعبہ سے متصل واقع ہے۔ آب زمزم کے کنوئیں میں چٹانوں سے پانی آتا ہے۔ یہ ریخیں خانہ کعبہ ، صفا و مروہ کے اطراف پھیلی ہوئی ہیں۔ ان سے نکلنے والا پانی کنوئیں میں آکر گرتا ہے ۔ آب زمزم کا مبارک چشمہ ہی مکہ مکرمہ کی تعمیر کا اہم سبب بنا -
آب زمزم کے فضائل وخصوصیات متعدد ہیں ، چند کا ذکر کیا جارہا ہے: آب زمزم جنت کے چشموں میں سے ایک ہے( مصنف بن ابی شیبہ)
آب زمزم روئے زمین کا افضل ترین ـپانی ہے ۔ حضرت عبد اللہ بن عباس ؓ کی روایت ہے کہ رسول اللہﷺ نے ارشاد فرمایا کہ روئے زمین کا سب سے افضل پانی زمزم ہے ، اس میں غذائیت بھی ہے اور مرض سے شفا بھی (طبرانی )
آب زمزم کا چشمہ روئے زمین کے سب سے مقدس مقام پر ہے ۔
زمزم کے چشمے کا وجود اور ظہور حضرت جبریل ؑکے واسطے سے ہوا جو اس کی فضیلت کے لئے کافی ہے ۔
آب زمزم کے ذ ریعے رسول اللہ ﷺ کا قلب اطہر4 بار مختلف موقعوں پر دھویا گیا یعنی حلیمہ سعدیہ ؓ کے یہاں بکریاں چرا نے کے دوران ، آپکے بچپن میں، نبوت و بعثت سے قبل اور واقعہ معراج سے قبل ۔
آب زمزم خوب سیر ہوکر پینا ایمان کی علامت قرار دیا گیا ۔ حضرت عبد اللہ بن عباس ؓ فرماتے ہیں کہ رسول کریم ﷺ نے ارشاد فرمایا خوب سیر ہوکر زمزم پینا نفاق سے برأت ہے کیونکہ منافقین اسے خوب سیرابی کی حد تک نہیں پیتے آب زمزم خوب سیر ہوکر پینے کے بعد قبولیت ِ دعا کا موقع ہوتا ہے ، حضرت عبد اللہ بن عباس ؓ آب زمزم پینے کے بعد یہ دعا مانگا کرتے تھے:-
اے اللہ ! میں تجھ سے علم نافع ، رزق واسع او ر ہرمرض سے شفائے کلی کا سوال کرتا ہوں آب زمزم کا پینا بہت سارے امراض سے شفا یابی کا سبب بنتا
ہے- ''
قیامت سے قبل سارے چشمے خشک ہوجائیں گے مگر آب زمزم کا چشمہ قیامت تک جاری و ساری رہے گا ۔ ضحاک بن مزاحم کی روایت ہے کہ اللہ تعالیٰ میٹھے پانی کو قیامت سے قبل اٹھالے گااور زمزم کے علاوہ سارا پانی زیر زمین چلا جائے گا۔ زمین اپناسارا سونا چاندی اگل دے گی، ایسا وقت آئے گا کہ ایک شخص تھیلا بھر کر سونا چاندی لیکر گھومے گا اور اسے قبول کرنے والا کوئی نہ ملے گا٠
آج کل تو زم زم کا کنواں سیل پیک ہے اور عام زایرین کی پہنچ اسکے دھانے تک ممکن نہیں لیکن صدیوں سے جاری و ساری زم زم کے کنویں میں لوگ آج سے اسی ، پچاسی سال قبل تک چرخی پر چلنے والی رسیوں میں بندھے ڈولوں کی مدد سے پانی نکالا کرتے تھے اور اس دوران چرخیاں ، ڈول ، رسی اور دیگر اشیا اس میں غیر دانستہ ، بشری کمزوریوں کے باعث گر جایا کرتی تھیں اور بہت ابتدائی زمانوں میں تو جو حکمران مکّہ مکرمہ میں شکست کھا جاتے تھے وہ کعبہ مشرفہ کے نوادرات جان بوجھہ کر اس میں چھپا جاتے تھے -

کتابوں میں حجر اسود کے متعلق بھی آیا ہے کہ '' بنو جرہم کے'' قبیلے نے جب شکست کھائی تو اسنے حجر اسود تک کو زم زم برد کر دیا تھا - وہ تو الله سبحان و تعالی کی مشیت تھی کہ وہ جب ایسا کر رہے تھے ، ایک خاتون نے انھیں ایسا کرتا دیکھ لیا جو بعد میں حجر اسود کی بازیابی کا ذریعہ بنا -

اسلئے بہت ضروری تھا کہ زم زم کے کنویں کی صفائی کرائی جایے اور اس میں گر جانے والی یا چھپا دینے والی اشیا سے اسے پاک کیا جایے - اس لیے
1399 ھ یعنی انیس سو اٹھتر عیسوی میں دو غوطہ خوروں یعنی محمد لطیف اور محمّد یونس کی مدد سے پہلی مرتبہ آب زمزم کے کنوئیں کا معائنہ کرایا گیا۔ غوطہ خوروں نے کنوئیں کی پیمائش کی، اسے صاف کیا ۔ اس کی تطہیر
( PURIFICATION) کی۔ کلورین سے تعقیم ( Sterilization) کی گئی۔ اس کی دیواروں کو دھویا گیا اور اس کا پانی پمپ سے نکالا گیا۔

کنوئیں کا عرض تقریباً 4 میٹر پایا گیا۔ کنوئیں کی دیواریں کنوئیں کے منہ سے تقریباً 16 میٹر 18 سینٹی میٹر کی گہرائی کے ساتھ اندر سے قلعی کردہ پائی گیئں اور زیر نظر تصویر کے غوطہ خوروں نے اس میں سے انگنت اشیا برآمد کیں جن کی تصویر بھی آپ دیکھ رہے ہیں جس میں ڈول یعنی بالٹی ، صراحیاں ، سکے اور دیگر اشیا نظر آ رہی ہیں - یہی وہ نوادرات ہیں جو زم زم کے کنویں سے بازیافت کی گئیں جن میں سے کچھ غالبا'' '' مکّہ میوزیم کی زینت بنی ہوئی ہیں ٠ الله اعلم
اھلا'' کے فورم سے اس پوسٹ کا اصل مقصد اس اہم معلومات کے ساتھہ غوطہ خوروں کی بذات خود اور انکے ہاتھوں زم زم کے کنویں سے برآمد ہونے والی اشیا کی نادر اور نایاب تصاویر آپکو دیکھنا مقصود تھا - اب مجھے یہ علم نہیں کہ آپکو یہ پوسٹ اور تصاویر اچھی بھی لگیں یا نہیں ؟
اور ہان اگر آپ ان غوطہ خوروں کی زم زم کے کنویں میں اترنے کی ویڈو دیکھنا چاہیں تو پلیز اس لنک کو کلک کرنا نہ بھولیں -
https://www.youtube.com/watch?v=yuFR_Z4eEFw
====================================================




LIST PAGE
NEXT PAGE
PREVIOUS PAGE